Saturday, April 20, 2024
Homesliderاسکولوں میں بھی اب ورچول لیبز ، طلبہ مصنوعی ذہانت اور عصری...

اسکولوں میں بھی اب ورچول لیبز ، طلبہ مصنوعی ذہانت اور عصری ٹکنالوجی کا استعمال کریں گے

- Advertisement -
- Advertisement -

نئی دہلی۔ قومی تعلیمی پالیسی کی سفارشات کے مطابق اب اسکولوں میں بھی ورچوئل لیبز سے سیکھنے کی سہولت ہوگی۔مرکزی حکومت کی اس اسکیم کے تحت سائنس اور ریاضی سے متعلق ملک کے 750 اسکولوں میں  ورچوئل لیبز اور 75 اسکل ای لیبز قائم کی جائیں گی۔وزارت تعلیم کے ایک سینئر افسر نے  ہے کہ 2022-23 کے دوران ریاضی اور سائنس میں 750 ورچوئل لیبز اور مثالی پڑھنے سیکھنے کا ماحول بنایا جائے گا تاکہ بچوں میں عقلی سوچ کی صلاحیت کو فروغ دیا جا سکے اور تخلیقی صلاحیتوں کو فروغ دیا جا سکے۔ مہارت پیدا کرنے کے مقصد کے لیے 75 اسکل ای لیبز قائم کیں۔اس کے تحت فزکس، کیمسٹری، ریاضی اور بیالوجی کے مضامین میں کلاس 9 سے 12 کے لیے دکشا پورٹل پر ایک ورچوئل لیب رکھی گئی ہے۔عہدیدار کے مطابق، ورچوئل لیب پروگرام سے مڈل اسکول کی سطح اور سیکنڈری اسکول کی سطح پر طلباء، اساتذہ اور اساتذہ کے معلمین کو فائدہ ہوگا۔ اس سے ملک کے تقریباً 10 لاکھ اساتذہ اور 10 کروڑ طلبہ کو فائدہ پہنچنے کی امید ہے۔
قابل ذکر ہے کہ اب تک ورچوئل لیبز صرف یونیورسٹیوں اور کالجوں میں ہی قائم کی گئی ہیں۔ انڈین انسٹی ٹیوٹ آف ٹکنالوجی سمیت ملک کے کچھ اعلیٰ تعلیمی اداروں کے ساتھ مل کر ایک مجازی دنیا بنائی گئی ہے جہاں طلباء ورچوئل لیبز کے ذریعے سائنسی تجربات اور اختراعات کر سکتے ہیں۔ مثال کے طور پر اگر کوئی طالب علم ورچوئل لیب کے ذریعے سرکٹ تیار کرنا چاہتا ہے تو اس ورچوئل لیب میں اس موضوع پر تمام آلات دستیاب ہیں۔مناسب یونٹ کی مزاحمت کو بتا کر، طلباء سرکٹ کھینچ سکتے ہیں اور اصل ڈیٹا حاصل کر سکتے ہیں۔
عہدیدار کے مطابق اسی طرح اب سکولوں میں مختلف کلاسوں کے بچوں کو نصاب کے بارے میں بنیادی معلومات دینے کے بعد ورچوئل لیبز استعمال کرنے کی ترغیب دی جائے گی۔ اس میں مصنوعی ذہانت کا استعمال کرتے ہوئے طلبہ  فزکس، کیمسٹری، بیالوجی اور ریاضی سے متعلق پیچیدہ موضوعات بشمول خلا، ماحولیات، کشش ثقل کو ورچوئل ماحول میں سمجھ سکیں گے اور وہ روٹ کے بجائے سوچ سمجھ کر لکھیں گے۔
اس کے ساتھ ہی وزارت تعلیم نے مقامی فنون کی حوصلہ افزائی اور مدد کے لیے ملک کے 750 اسکولوں میں کلاسلا پروگرام شروع کرنے کا بھی منصوبہ بنایا ہے۔عہدیدار نے کہا کہ اس پروگرام کا مقصد اسکولی طلباء کو ملک کے مختلف فنون کے بارے میں آگاہی دینا اور ہندوستان کے امیر ثقافتی ورثے کے بارے میں معلومات اکٹھا کرنے میں ان کی مدد کرنا ہے۔انہوں نے کہا کہ کلاشالا پروگرام کے تحت مختلف فنکارا سکولوں کا دورہ کریں گے اور طلباء کو فنون کے بارے میں معلومات دیں گے۔