Thursday, May 30, 2024
Homesliderتبدیلی مذہب کو روکنے کےلئے مرکزی قانون، وی ایچ پی کا مطالبہ

تبدیلی مذہب کو روکنے کےلئے مرکزی قانون، وی ایچ پی کا مطالبہ

- Advertisement -
- Advertisement -

نئی دہلی ۔ سپریم کورٹ کی جانب سے جبری مذہب کی تبدیلی کو انتہائی سنگین مسئلہ قرار دینے کے ایک دن بعد وشو ہندو پریشد (وی ایچ پی) کے لیڈر سریندر جین نے مرکز پر زور دیا کہ وہ غیرقانونی تبدیلی مذہب کو روکنے کے لیے جلد ہی ایک مرکزی قانون بنائے۔جین وی ایچ پی کے مرکزی جوائنٹ جنرل سکریٹری نے کہا کہ ملک بھر میں پیش آنے والے مختلف واقعات اور اس موضوع پر بنائے گئے کمیشن بھی بہت بلند اور واضح کہتے ہیں کہ غیر قانونی تبدیلی مذہب کی آزادی اور قومی سلامتی کے بنیادی حق کے لیے خطرہ ہے۔

سپریم کورٹ نے پیر کو واضح انتباہ دیا کہ اگر اس کو نہیں روکا گیا تو ملک کے لیے خطرناک صورتحال پیدا ہوجائے گی۔عدالت عظمیٰ نے کہا ہے کہ زبردستی، رغبت یا دھوکہ دہی کے ذریعہ مذہبی تبدیلیاں بالآخر قوم کی سلامتی اور مذہب کی آزادی اور شہریوں کے ضمیر کو متاثر کرسکتی ہیں جبکہ مرکز کو ہدایت دی کہ وہ اقدامات کرے  اور واضح کرے کہ وہ کیا کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔ لازمی یا دھوکہ دہی سے مذہب کی تبدیلی کو روکنے کے لیے کیا کرنے والی ہے ۔

مذہب کی آزادی ہو سکتی ہے لیکن جبری تبدیلی سے مذہب کی آزادی نہیں ہوسکتی ہے یہ ایک بہت سنگین مسئلہ ہے۔ ہر کسی کو اپنا مذہب منتخب کرنے کا حق ہے، لیکن جبری تبدیلی یا لالچ دے کر نہیں۔جین نے زور دے کر کہا کہ عدلیہ نے پہلے بھی بہت سے معاملات میں غیر قانونی تبدیلیوں پر مرکزی قانون کی ضرورت پر زور دیا تھا۔ یہ بات بار بار واضح ہوچکی ہے کہ زبردستی، دھوکہ دہی اور رغبت سے کی گئی تبدیلی غیرقانونی ہے لیکن واضح قانون کی عدم موجودگی میں، سازش کرنے والوں اور دھوکہ دینے والوں کو سزا نہیں دی جا سکتی۔

وی ایچ پی لیڈر نے یہ بھی کہا کہ تاریخ ہمیں یہ بدقسمتی سے سبق سکھاتی ہے کہ اس طرح کے غیر قانونی تبدیلیوں نے ہندوستان کے جغرافیہ کو پہلے ہی تبدیل کردیا ہے اور اسے جیوسٹریٹیجک، جیو پولیٹیکل اور جیو کلچرل نقصانات میں ڈال دیا ہے اور اب بھی اس کی سلامتی، خوشحالی اور علاقائی سالمیت کو خطرہ ہے۔