Tuesday, May 28, 2024
Homesliderرفعت اللہ رفعتؔ کی نظموں کا تنقیدی جائزہ   

رفعت اللہ رفعتؔ کی نظموں کا تنقیدی جائزہ   

- Advertisement -
- Advertisement -

چینائی۔ خطیب رفعت اللہ رفعتؔ تمل ناڈو کے ہم عصر شعراء میں اپنی منفرد اور الگ شناخت وہ پہچان رکھتے ہیں۔ ان کی شعری تخلیقات وقتاً فوقتاً ادبی رَسائل میں شائع ہوتی رہتی ہیں۔ 2019ء کے بعد انھوں نے نظموں کی صورت میں جو کلام اردو قارئین کی نذر کیا ہے۔ رفعت اللہ رفعتؔ بنیادی طور پر نظم کے شاعر ہیں، لیکن انھوں نے غزلیں بھی کہی ہیں۔ رفعتؔ تمل ناڈو کے ایک صنعتی شہر آمبور کے ایک معزز اور دین دار خطیبؔ گھرانے میں اپنی آنکھیں کھولیں۔  رفعتؔ اللہ کو اللہ نے علم و ادب کی دولت اور عقل و شعور کی نعمتوں سے نوازا ہے۔ ان کو شاعری کا ابتداہی سے چَسکا رہا۔ حضرتِ ابوالبیان حمادؔ اور محمد یعقوب اسلمؔ کی رہنمائی میں شعر کہنے کے علاوہ مشاعروں میں حصہ لیتے تھے، کچھ ہی مدت میں انہیں شعر گوئی پر اتنی قدرت حاصل ہوگئی کہ خود سے شعر کہنے اور سنانے کے قابل ہوگئے۔شاعری میں انہوں نے رفعت تخلص اختیار کیا۔

       رفعتؔ ایک شائستہ مہذب اور فراغ دل انسان ہیں، چونکہ قوم و ملت سے ہمدردی کا جذبہ رکھتے ہیں اس لیے ان کی شاعری بھی ہمدری کے اوصاف سے ممیز ہے۔ رفعتؔ ایک جہاں دیدہ شخصیت ہیں،  مشرقی وُسطیٰ کے علاوہ دنیا بھر کے مشہور ممالک کا سفر بھی کیا ہے اور آج کل امریکہ میں سکونت پذیر ہیں۔ر فعتؔ کا کلام رطب و یابِس سے پاک ہے کیونکہ صالح اور مثبت قدروں کے پاسدار ہیں، اس لیے اُن کے کلام میں محبت، وفا، اخلاص، ہمدردی اور راضی بہ رضا رہنے کا پیغام ملتا ہے۔ رفعت ؔکی شاعری تصنُّع سے بالکل پاک ہے۔ انھوں نے اپنے کلام کو بے جا حسن کاری، غیر ضروری آرائش اور غیر حقیقی چیزوں کا آئینہ دار نہیں بنایا۔ چونکہ وہ اپنے دل کی بات کو الفاظ کا جامہ پہنانے کا ہنر جانتے ہیں اس لیے خلوص و انہماک سے اپنی بات اس طرح کرتے ہیں کہ:

                    ”شاید کہ اُتر جائے تیرے دل میں میری بات“

        رفعت ؔنے اپنی نظموں میں وحدتِ خیال، زبان پر قدرت اور الفاظ کے انتخاب کا سلیقہ کو بڑی خوش اسلوبی سے نبھایا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ رفعتؔ کی نظمیں روانی اور سلاست کی ترجمان بن گئی ہیں۔ اشعار ملاحظہ ہوں:

               ؎              ہمیں  اپنا   مذہب  بدلنا  نہیں

                            ہمیں اپنے رستے سے  ٹلنا  نہیں

                            نئے  شُعبدوں سے  بہلنا  نہیں

                            کسی  کے بھروسے پہ  پلنا  نہیں

                               ———————–

               ؎             سنبھالیں  گے  ہر  طور  ہم  اپنا  بَل

                            نہ  آئے  ہمارے  عمل  میں  خلل

                            نہ  چھوڑیں  کبھی  راہِ  صدق و صفا

                            کریں  ہم  کسی  پر  نہ  جور  و جفا

       رفعتؔ نے روایتی نظموں کے علاوہ آزاد نظموں میں بھی طبع آزمائی کی ہے۔ رفعتؔ کی فکری بلندیوں کا احساس ان کی آزاد نظموں میں بھی ملتا ہے۔ ہئیت کے اعتبار سے بھی رفعتؔ کی آزاد نظمیں بھرپور فنی لوازمات سے لبریز ہیں۔ ان کی آزاد نظموں میں رفعتؔ نے قارئین کو دنیا کی بے ثباتی اور بے جا خواہشوں سے باخبر کیا ہے اور یہ پیغام بھی دیا ہے کہ دنیا میں صرف مثبت سوچ رکھنے والوں کی ہمیشہ کامیابی ہوتی ہے۔ان کی ایک مونولاگ نظم سامعین کی نذرہے اس نظم میں رفعت نے انسان کو اس فانی دنیا کی حقیقت سے اگاہی کرواتے ہیں اس میں جینے اور مرنے کا سلیقہ سکھاتے ہیں، جنگ جوئی اور اس کے منفی اثرات پر چونکا دینے والے منظر کو پیش کرتے ہوئے خون کو ہولی کے رنگ سے تعبیر کرتے ہوئے امن و سلامتی کا پیغام دینا ایک نرالہ انداز ہے ملاحظہ ہوں:

         ؎         اس دنیا میں

                 ہاں ہاں، آج کی فانی دنیا میں

                 چین سے تم جینا سیکھو

                 اور سکوں سے مرنا بھی

                 ہر طرف، ہر چوراہے پر

                 بارُودی سرنگیں

                 بچھی ہوئی ہیں

                 دیکھو زمیں کے سینے پر

                 ڈھنگ سے چلنا سیکھو

                 جسم ہمارے لاغر ہیں

                خون برائے نام ہے اس میں

                غور سے جو تم دیکھو گے

                صرف رنگ ہی رنگ ہے

                رنگ کی قیمت کیا ہے

                آؤ درندو! جلد یہاں

                خون اگر چہ کچھ بھی نہیں

                پھر بھی ہمارا جسم تو ہے

                خون کی ہولی اس سے کھیلو

       رفعت اللہ رفعتؔ کے اس کلام کو پڑھنے کے بعدمیرا یہ تاثر ہے کہ رفعتؔ ہم عصر شعراء میں اپنے خاص لب و لہجے اور فکری جہتوں کے اظہار کی بدولت بلاشبہ اپنی ایک انفرادی شناخت  رکھتے ہیں۔

      عائشہ صدیقہ جے

                                     ریسرچ اسکالر، شعبہ عربی، فارسی و اردو،

مدراس یونیورسٹی، چینائی