Friday, July 12, 2024
Homesliderسونیا گاندھی سے ای ڈی کی  تین گھنٹوں کی پوچھ گچھ

سونیا گاندھی سے ای ڈی کی  تین گھنٹوں کی پوچھ گچھ

- Advertisement -
- Advertisement -

نئی دہلی ۔ انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ (ای ڈی) نے چہارشنبہ  کو نیشنل ہیرالڈ اخبار سے متعلق منی لانڈرنگ مقدمہ  میں کانگریس صدر سونیا گاندھی سے تین گھنٹے سے زیادہ پوچھ گچھ کی۔حکام نے کہا کہ انہیں کوئی تازہ سمن جاری نہیں کیا گیا ہے۔سونیا گاندھی اس معاملے میں اپنا بیان ریکارڈ کروانے کے لیے تیسری بار ای ڈی کے سامنے پیش ہوئیں۔ وہ اپنی بیٹی پرینکا گاندھی واڈرا اور بیٹے راہول گاندھی کے ساتھ صبح 11 بجے مرکزی دہلی میں وفاقی تحقیقاتی ایجنسی کے دفتر پہنچیں۔
تفتیش کاروں کی ایک ٹیم نے تقریباً 11.15 بجے سونیا گاندھی  سے پوچھ گچھ شروع کی۔ تفتیش کاروں میں چیف تفتیشی افسر اور ایک شخص شامل ہے جس نے سونیا  گاندھی کے بیانات کو کمپیوٹر پر ریکارڈ کیا ہے۔کانگریس صدر تقریباً دو بجے دوپہر ای ڈی کے دفتر سے نکلے۔عہدیداروں نے بتایا کہ سونیا گاندھی سے اس سے پہلے بھی دو بار آٹھ گھنٹے تک پوچھ گچھ کی گئی ہے جس میں ان سے 65 سے 70 سوالات پوچھے گئے ہیں۔ خیال کیا جاتا ہے کہ ایجنسی نے چہارشنبہ  کو ان سے 30-40 مزید سوالات پوچھے ہیں۔

کانگریس کا پارلیمنٹ ہاؤس کے باہر دھرنا

کانگریس کے سینئر قائدین اور ارکان پارلیمنٹ نے نیشنل ہیرالڈ اخبار سے متعلق مبینہ منی لانڈرنگ کیس کے سلسلے میں پارٹی صدر سونیا گاندھی سے انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ کی پوچھ گچھ کے خلاف بدھ کو پارلیمنٹ ہاؤس کے باہر دھرنا دیا۔ پولیس نے انہیں اپنی تحویل میں لے لیا۔پارٹی کے جی 23 گروپ کے دو سرکردہ اراکین غلام نبی آزاد اور آنند شرما بھی آج 75 سالہ سونیا گاندھی کی حمایت میں سامنے آئے اور کہا کہ کانگریس صدر کی صحت  اورعمر کے پیش نظر انہیں بار بار پوچھ گچھ کے لیے بلانا مناسب نہیں ہے۔
ای ڈی کی کارروائی کے خلاف کانگریس کے اراکین پارلیمنٹ نے پارلیمنٹ ہاؤس سے وجے چوک تک مارچ نکالا۔ اس کے بعد وہ وجے چوک پر دھرنے پر بیٹھ گئے۔ بعد ازاں پولیس نے اسے اپنی تحویل میں لے لیا۔پارٹی کے جنرل سکریٹری جے رام رمیش نے کہاآج ہمارے ممبران پارلیمنٹ کو گرفتار کیا گیا ہے۔ یہ جمہوریت کا قتل ہے۔ مودی حکومت مہنگائی پر پارلیمنٹ میں بحث نہیں ہونے دے رہی ہے۔ اگر ہم سیاسی انتقام کے خلاف آواز اٹھا رہے ہیں تو ہمیں گرفتار کیا گیا ہے۔انہوں نے یہ بھی کہاصرف خدا، وزیر اعظم اور وزیر داخلہ جانتے ہیں کہ انہیں کہاں لے جایا جا رہا ہے۔ یہ ہندوستان  میں جمہوریت کو کچلنے کے لیے جا رہا ہے۔