Saturday, June 22, 2024
Homesliderعثمانیہ جنرل ہسپتال میں ڈاکٹروں کی قلت ، کورونا کے بحران...

عثمانیہ جنرل ہسپتال میں ڈاکٹروں کی قلت ، کورونا کے بحران میں عوام پریشان

- Advertisement -
- Advertisement -

حیدرآباد ۔عثمانیہ جنرل ہسپتال میں کوویڈ 19 کے معاملات میں مسلسل اضافہ دیکھنے میں آرہا ہے۔ اسپتال حکام نے ڈاکٹروں کی کمی کی اطلاع دی اور مریضوں کی آمد کو پورا کرنے کے لئے مزید ڈاکٹروں کی ضرورت پر توجہ مبذول کروائی ہے ۔ صرف تین دن میں ایک ہزارمعاملات کا اضافہ ہونے کے ساتھ ہی ہسپتال جانے والے لوگوں کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے۔

مریضوں کی تعداد میں اضافہ اور ان کے علاج کے لئے عثمانیہ جنرل ہسپتال کے سپرنٹنڈنٹ نے دوسرے تمام پی جی اور ہاؤس سرجنوں کو کوویڈ 19 کی خدمات پر مامور کرنے کا مطالبہ کیا ہے ۔ جاری کردہ حکم کے مطابق حیدرآباد کے عثمانیہ جنرل اسپتال میں کورونا  مریضوں کی تعداد میں اچانک اضافے کے پیش نظر ، محکموں کے پروفیسر اور صدر شعبے کے عہدے داروں سے عارضی طور پرپی جی اور ہاؤس سرجنوں کوایچ او ڈی  جنرل کے عہدے پر تعینات کرنے کی درخواست کی گئی ہے تاکہ وہ  میڈیسن جنرل میڈیسن ڈیپارٹمنٹ کے تحت کام کرنے کے لئے دستیاب ہوں سکے ۔

 کووڈ 19 کے فرائض انجام دینے کے لئے جنرل سرجری ، اینستھیزیا ، ڈی وی ایل ، آرتھوپیڈکس ، نیورولوجی ، امراض قلب ، پلاسٹک سرجری ، اینڈو کرینولوجی اور میڈیکل گیسٹرو سائنس کے شعبے کے پی جیز دستیاب ہوں  گے۔ جونئیر کے ڈاکٹروں کے کہنے کے بعد ایک ہفتہ بعدیہ بات سامنے آئی ہے کہ ان کا کیریئر داؤ پر لگا ہوا ہے کیونکہ وہ اپنی اہداف پرتوجہ دینے میں قاصر ہیں۔ گاندھی ہاسپٹل مریضوں کا علاج کر رہا تھا اور اس تناظر میں جونیئر ڈاکٹروں نے کہا ہے کہ کوویڈ 19 کے فرائض کی وجہ سے پچھلے تین مہینوں میں وہ اپنی مہارت سے متعلق مریضوں کے علاج میں تین ماہ کا تجربہ اور سیکھنے سے محروم ہوگئے ہیں۔