Wednesday, May 22, 2024
Homesliderغیرتسلیم شدہ مدارس کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی کا حکم

غیرتسلیم شدہ مدارس کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی کا حکم

- Advertisement -
- Advertisement -

لکھنؤ۔ اتر پردیش حکومت نے عہدیداروں کو غیر تسلیم شدہ مدارس کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی کرنے کی ہدایت دی ہے۔ضلع مجسٹریٹس کے ذریعہ ریاستی حکومت کو پیش کی گئی سروے رپورٹ کے مطابق ریاست بھر میں تقریباً 8,441 مدارس ایسے ہیں جن کی کوئی شناخت نہیں ہے۔ریاستی وزیر برائے اقلیتی بہبود،مسلم وقف اور حج، دھرم پال سنگھ نے کہا کہ انہوں نے محکمہ کے عہدیداروں کو ہدایت دی ہے کہ وہ تمام غیر تسلیم شدہ مدارس کی فہرست محکمہ کے پورٹل اور میلا ایپ پر اپ لوڈ کریں تاکہ والدین کو کسی خاص مدرسے کے بارے میں صحیح معلومات ملیں ۔ اپنے بچوں کو غلط اداروں میں نہ بھیجیں جہاں انہیں گمراہ کیا جا سکے۔

وزیر نے کہا کہ سروے کے دوران 8,441 غیر تسلیم شدہ مدارس کی نشاندہی کی گئی جن میں تقریباً 7,64,164 طلباء، لڑکیاں اور لڑکے دونوں شامل ہیں۔انہوں نے کہا یہ بچے ہمارے ملک کا مستقبل ہیں اور اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کہ وہ مرکزی دھارے کے معاشرے کے ساتھ منسلک ہیں، یہ ضروری ہے کہ انہیں جدید تعلیم تک رسائی دی جائے ۔ انہوں نے مزید کہا کہ محکمہ فنڈنگ ​​کے ذرائع کی نشاندہی کرنے میں بھی کامیاب رہا ہے۔ غیر تسلیم شدہ مدارس کے لیے اور زیادہ تر معاملات میں عطیات اور زکوٰۃ فنڈنگ ​​کے اہم ذرائع ہیں۔

سنگھ نے عہدیداروں کو ہدایت دی کہ اقلیتی برادری کے بچوں کو نئے تعلیمی قوانین کے مطابق تعلیم فراہم کرنے کے لیے کارروائی کریں۔انہوں نے کہا کہ غیر تسلیم شدہ مدارس کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی کی جانی چاہیے اور اب تک جن غیر تسلیم شدہ مدارس کی نشاندہی کی گئی ہے ان کے بارے میں واضح تصویر دینے کے لیے ایک پریزنٹیشن تیار کی جانی چاہیے۔

اسے آنے والے دنوں میں چیف منسٹر  یوگی آدتیہ ناتھ کے سامنے پیش کیا جائے گا۔یاد رہے کہ ریاستی حکومت کے حکم پر 10 ستمبر کو تمام اضلاع میں مدارس سے متعلق سروے شروع کیا گیا تھا۔حکومت نے موقف  برقرار رکھا ہے کہ سروے کا استعمال صرف مدارس میں تعلیم کی سطح کو بہتر بنانے کے لیے کیا جائے گا۔سب سے زیادہ غیر تسلیم شدہ مدارس مرادآباد ضلع میں پائے گئے۔