Thursday, May 30, 2024
Homesliderمنی لانڈرنگ مقدمہ : جیکولین فرنینڈس کو ضمانت قبل ازگرفتاری منظور

منی لانڈرنگ مقدمہ : جیکولین فرنینڈس کو ضمانت قبل ازگرفتاری منظور

- Advertisement -
- Advertisement -

نئی دہلی۔ دہلی کی ایک عدالت نے منگل کو بالی ووڈ اداکارہ جیکولین فرنینڈس کو 200 کروڑ روپے کے منی لانڈرنگ مقدمہ میں ضمانت قبل ازگرفتاری منظور کر لی جس میں کروڑ پتی مجرم سکیش چندر شیکھر شامل ہیں، جس کی تحقیقات انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ (ای ڈی) کر رہی ہے۔ ایڈیشنل سیشن جج شیلندر ملک نے یہ حکم سنایا جو گزشتہ ہفتے محفوظ کیا گیا تھا۔ آرڈر کی تفصیلی کاپی دن میں بعد میں دستیاب کروائی گئی۔

ای ڈی نے حال ہی میں جیکولین کو ملزم کے طور پر نامزد کرتے ہوئے اپنی دوسری ضمنی چارج شیٹ داخل کی تھی۔ 26 ستمبر کو عدالت نے جیکولین کو گرفتاری سے عبوری تحفظ فراہم کیا تھا۔ جیکولین اور بالی ووڈ کی ایک اور شخصیت نورا فتیحی نے مقدمہ میں بطور گواہ اپنے بیانات قلمبند کروائے ہیں۔ قبل ازیں ای ڈی نے جیکولین کے 7.2 کروڑ روپے کے فکسڈ ڈپازٹ کو منسلک کیا تھا۔ تحقیقاتی ایجنسی نے ان تحائف اور جائیدادوں کو جیکولین اور نورا کو جرم کی آمدنی قرار دیا۔ فروری میں، ای ڈی نے چندر شیکھر کی مبینہ معاون پنکی ایرانی کے خلاف اپنی پہلی ضمنی چارج شیٹ داخل کی تھی جس نے انہیں بالی ووڈ اداکاروں سے متعارف کروایا تھا۔

چارج شیٹ میں الزام لگایا گیا تھا کہ پنکی جیکولین کے لیے مہنگے تحائف کا انتخاب کرتی تھی اور چندر شیکھر کی جانب سے ادائیگی کرنے کے بعد انہیں اپنی رہائش گاہ پر چھوڑ دیتی تھی۔ گزشتہ دسمبر میں جانچ ایجنسی نے ایڈیشنل سیشن جج پروین سنگھ کی عدالت میں اس معاملے میں پہلی چارج شیٹ داخل کی تھی۔ سرکاری ذرائع کے مطابق چندر شیکھر نے مختلف ماڈلز اور بالی ووڈ کی مشہور شخصیات پر تقریباً 20 کروڑ خرچ کیے ہیں۔ چند لوگوں نے اس سے تحائف لینے سے انکار کر دیا تھا۔ یہاں اس بات کا تذکرہ بھی اہم ہے کہ اداکارہ نے خود پر لگائے الزامات کی تردید کرتے ہوئے تحائف کو اپنی محنت کی کمائی قرار دیا تھا ۔