Thursday, May 30, 2024
Homesliderمودی کا سیلابی ٹوئٹ، جے شنکر کا بیان،ہند۔پاک تعلقات میں کچھ پگھل...

مودی کا سیلابی ٹوئٹ، جے شنکر کا بیان،ہند۔پاک تعلقات میں کچھ پگھل گیا

- Advertisement -
- Advertisement -

نئی دہلی ۔ پاکستان کا کئی سالوں میں بدترین سیلاب ہندوستان  کے ساتھ منجمد تعلقات کو ختم کرنے میں  نئی جان  ڈال سکتا ہے۔ وزیر اعظم نریندر مودی نے انسانی تباہی پر اپنی ہمدردی کا اظہار کرتے ہوئے ٹویٹ کیا اور وزیر خارجہ ایس جے شنکر نے کہا کہ ہندوستان کو علاقائیت کے خیال کو آگے بڑھانے میں زیادہ فراخ اور زیادہ غیر باہمی ہونا چاہیے۔پاکستان میں سیلاب سے ہونے والی تباہی کو دیکھ کر دکھ ہوا۔ ہم متاثرین کے خاندانوں، زخمیوں اور اس قدرتی آفت سے متاثر ہونے والے تمام لوگوں کے تئیں دلی تعزیت کا اظہار کرتے ہیں اور معمول کی جلد بحالی کی امید کرتے ہیں۔ مودی نے پیر کی شام ٹویٹ کیا۔ ٹویٹ کو 1 لاکھ سے زیادہ لائکس اور 11,000 سے زیادہ ری ٹویٹس ملے، جو اس بات کی نشاندہی کرتا ہے کہ انسانیت  کا حلقہ حقیقی ہے۔

علیحدہ طور پر ایشیا سوسائٹی کے تھنک ٹینک کے ایک پروگرام میں جے شنکر نے علاقائیت پر اپنے خیالات پیش کیے۔جہاں جے شنکر نے کہا میں زیادہ علاقائیت کا بہت مضبوط حامی ہوں ، جو ہندوستان درحقیقت زیادہ فیاض اور زیادہ غیر باہمی اور جو کچھ بنا رہا ہے اس میں زیادہ موثر ہے۔ وہ ہندوستان میں سری لنکا کے ہائی کمشنر ملندا موراگوڈا کے ایک سوال کا جواب دے رہے تھے۔

یقیناً یہ الفاظ پہلے بھی بولے جاچکے ہیں – 1997 تک جب اس وقت کے وزیر اعظم آئی کے گجرال کی جنوبی ایشیا کے لیے غیر باہمی خارجہ پالیسی اس بنیاد پر مبنی تھی کہ ہندوستان کا حجم، آبادی اور جی ڈی پی اس سے کہیں زیادہ ہونے کا متحمل ہوسکتا ہے۔ اپنے پڑوسیوں کے لیے زیادہ فیاض ہونا ہوگا ۔ اسے گجرال نظریہ کہا جاتا تھا لہذا جے شنکر آج جو کچھ کہہ رہے ہیں وہ نیا نہیں ہے، جس کا مطلب ہے کہ کئی سوالات اٹھتے ہیں۔ پہلا وزیر موصوف آج پاکستان پر نرم رویہ کیوں اختیار کررہے ہیں، جب کہ بی جے پی حکومت نے بار بار کہا ہے کہ جب تک سرحد پار سے دہشت گردی ختم نہیں ہوجاتی، وہ اس کے ساتھ کوئی بات چیت نہیں کرے گی۔ تو اب کیا بدلا ہے؟

دوسرا کیا نئی دہلی کو پاکستانیوں کی مدد کےلیے کسی انسانی آفت کی ضرورت تھی؟ اور تیسرا، کیا کوئی ایسا بیک چینل ہے جو عوامی طور پر الگ تھلگ دو ممالک کے درمیان کام کرتا رہتا ہے – جس کے نتیجے میں فروری 2021 میں لائن آف کنٹرول پر امن و آشتی کا معاہدہ ہوا تھا  اوریہ کہ دونوں فریق دوبارہ مذاکرت شروع ہونے کے لیے مناسب لمحے کا انتظار کررہے ہیں؟