Thursday, May 30, 2024
Homesliderکورونا بحران کے جلد خاتمہ کے آثار مل گئے

کورونا بحران کے جلد خاتمہ کے آثار مل گئے

- Advertisement -
- Advertisement -

حیدرآباد ۔ڈیلٹا اور اومی کرون سمیت مختلف وائرس کے تیزی سے پھیلنے والی مختلف حالتوں کے ابھرنے کے باوجود امید کی روشنی نظر آگئی ہے۔ مختلف قسم کے کورونا وائرس کے بارے میں نئے مطالعات سے پتہ چلتا ہے کہ وبائی مرض کا خاتمہ نظر آنے لگا ہے ۔ اس بات پر غور کرتے ہوئے کہ مریضوں کی تعداد ریکارڈ سطح تک بڑھ گئی ہے لیکن شدید مریضوں اور دواخانہ میں داخل ہونے والوں کی تعداد میں اضافہ نہیں ہوا۔ کچھ سائنسدانوں نے کہا ہے کہ یہ اعداد و شمار وبائی امراض کے ایک نئےکم تشویشناک باب کا اشارہ دیتے ہیں۔
یونیورسٹی آف کیلیفورنیا سان فرانسسکو کی ایک امیونولوجسٹ مونیکا گاندھی نے کہاہم اب بالکل مختلف مرحلے میں ہیں۔وائرس ہمیشہ ہمارے ساتھ رہے گا لیکن میری امید ہے کہ یہ ہمارے اجسام میں اتنی زیادہ قوت مدافعت کا باعث بنتی ہے کہ یہ وبائی مرض پر قابو پا لے گی۔جہاں تک اومی کرون کا تعلق ہے پچھلے ہفتے کے اعداد و شمار بتاتے ہیں کہ وسیع پیمانے پر استثنیٰ اور متعدد تغیرات کے امتزاج کے نتیجے میں ایک وائرس پیدا ہوا ہے جو پچھلی قسم سے کہیں کم شدید بیماری کا سبب بن رہاہے۔ جنوبی افریقہ سے باہر ہونے والی ایک تحقیق سے پتا چلا ہے کہ وائرس کی اومی کرون چوتھی لہر کے دوران وہاں کےدواخانوں میں داخل ہونے والے مریضوں میں ڈیلٹا کے زیر اثر تیسری لہر کے دوران داخل ہونے والے مریضوں کے مقابلے میں شدید بیماری کا امکان 73 فیصد کم تھا۔
یونیورسٹی آف کیپ ٹاؤن کی ایک امیونولوجسٹ وینڈی برگرز نے کہا اب اعداد و شمار کافی ٹھوس ہیں کہ دواخانوں میں داخل ہونے والے مریضوں اورمعاملات کو ایک دوسرے سے جوڑا گیا ہے۔ابتدائی اعداد و شمار نے بتایا کہ اومی کرون کے تغیرات نے وائرس کو آسانی سے نہ صرف غیر ویکسین شدہ لوگوں کو متاثر کیا لیکن سوال یہ رہا کہ ایک بار جب اومی کرون دفاع کی ان پہلی لائنوں سے آگے نکل جائے گا تو وہ کیسے کام کرے گا۔ ایسا لگتا ہے کہ متعدد عوامل نے اومی کرون کوکی پچھلی لہروں کے مقابلے میں کم وائرل یا کمزور بنا دیا ہے۔