Wednesday, May 22, 2024
Homesliderکھرگے کی کامیابی ، کانگریس میں جمہوریت کا کھیل

کھرگے کی کامیابی ، کانگریس میں جمہوریت کا کھیل

- Advertisement -
- Advertisement -

نئی دہلی ۔ کانگریس کے نئے صدر ملکارجن کھرگے کبھی بھی آزادانہ اور منصفانہ انتخابات میں حصہ لینے والے نہیں تھے۔ وہ ایک ایسے  خاندان کے فرنٹ مین تھے جس نے ایک ووٹ ڈالنے سے پہلے ہی نتیجہ طے کرلیا تھا۔ اس وقت اور اب کے درمیان کیا ہوا، جیسا کہ آج گاندھی خاندان کے ایک بزرگ قائد نے اسے سائیڈ شو بنادیا ہے ۔واقعات کی ترتیب پر غورکرنے سے اندازہ  ہوجاتا ہے کہ  29 ستمبر کوکانگریس کے صدارتی انتخابات کے لیے نامزدگی بند ہونے سے ایک دن پہلےششی تھرور میدان میں واحد بڑے امیدوار تھے۔ اشوک گہلوت نے راجستھان میں ایگزیکٹیو پاورچھوڑکردہلی میں گاندھیوں کا مربی بننے کی حکمت کے بارے میں شدید شکوک پیدا کرنے کے بعد خود کو انتخابات سے الگ کرلیا تھا۔ چنانچہ پارٹی اسٹیبلشمنٹ نے کھرگے کو نکالنے کی دوڑ لگا دی۔ اگلی صبح کھرگے نے جوکیرئیر کے سفاکوں میں گھیرے میں تھے کانگریس پارٹی کی جانب سے اپنا پرچہ نامزدگی داخل کیا۔

اس کے بعد تھرور کو اتفاق رائے کے امیدوار کے حق میں دستبردار ہونے کے لیے قائل کرنے کی کوشش کی گئی۔ ایک لوک سبھا رکن جس نے کانگریس میں حقیقی جمہوری اصلاحات کے لیے جذباتی طور پر بحث کرتے ہوئے دو سال گزارے، صدارتی مقابلے میں حصہ لینے والے پہلے شخص بن گئے، اور پارٹی کو جمہوری بنانے اور اس کے احیاء کو شروع کرنے کے بارے میں ایک تفصیلی منشور شائع کرنے کے لیے دباؤ ڈالا گیا۔ راجیہ سبھا کے ایک عظیم فرد کو آخری لمحات میں متبادل سروگیٹ امیدوار کے طور پر بھرتی کیا گیا۔
سونیا گاندھی جنہوں نے کبھی عوام میں اپنی غیر جانبداری کا دعویٰ نہیں کیا تھا، کھرگے کے ساتھ گاندھی جینتی پر راج گھاٹ پر نمودار ہوئیں۔ تھرور کو تقریباً  ہر شہر میں پارٹی اپریٹچکس نے مسترد کر دیا۔ اس کے باوجود وہ مہم پر ڈٹے رہے۔ کھرگے نے خود کو سونیا گاندھی کے اطراف گھوما نے  تک محدود رکھا، آخر کار وہ کامیاب ہوئے۔ لیکن پارٹی اسٹیبلشمنٹ کا پراکسی امیدوار، یہ بھول کر کہ اس نے چند ہفتے پہلے ہی حکومت پر عام لوگوں پر بھاری اخراجات کا بوجھ ڈالنے کا اسکرپٹ پڑھا تھا، ایک خانگی ہوائی جہاز میں ہندوستان کے گرد چکر لگایا اور پھر بھی یہ تھرور ہی تھے بجٹ ایئر لائنز کافی کچھ کہا تھا ۔